Sufinama

میں نہیں کہتا انا الحق یار کہتا ہے کہ بول

تراب علی دکنی

میں نہیں کہتا انا الحق یار کہتا ہے کہ بول

تراب علی دکنی

MORE BYتراب علی دکنی

    میں نہیں کہتا انا الحق یار کہتا ہے کہ بول

    کیا کروں لاچار ہوں دل دار کہتا ہے کہ بول

    بے دھڑک رمز انالحق اے دلا منصور وار

    اب ایہی ہے مصلحت بردار کہتا ہے کہ بول

    خوش نہیں افشائے راز دلربا پیش عموم

    ہاتف غیبی مجھے اظہار کہتا ہے کہ بول

    میں کیا ضبط نفس لیکن ہے مرضی اوس کی یوں

    راز پنہاں با در و دیوار کہتا ہے کہ بول

    نئیں اتھا ہر چند دل میں جو کہوں خلوت کا بھید

    پردہ در ہو آپ او للکار کہتا ہے کہ بول

    دھوم سوں فصل بہار آتی ہے اے مطرب چلی

    میکدے میں بلبل گل زار کہتا ہے کہ بول

    حرف جو رکھتے ہو مجھ پر یہاں مرا کیا اختیار

    جام مل کی کیفیت سرشار کہتا ہے کہ بول

    مرغ دل بسمل کیا سو کشتگان‌ عشق کوں

    آج کا احوال سب خونخوار کہتا ہے کہ بول

    چتر سر تیشے کوں کر فرہاد پایا خسروی

    او خبر شیریں کو جا کہسار کہتا ہے کہ بول

    حاشیہ واحد نہیں رکھتا ہے لیکن ہر نقط

    ہندسہ داں داں نقطۂ اسرار کہتا ہے کہ بول

    اے ترابؔ مے پرست اوس کیف کی سب کیفیت

    محتسب کوں ساقیٔ مے خوار کہتا ہے کہ بول

    مأخذ :
    • کتاب : دیوان تراب (Pg. 258)
    • Author : شاہ تراب علی دکنی
    • مطبع : انجمن ترقی اردو (پاکستان) (1983)
    • اشاعت : First

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY