Sufinama

بانس کی لے بانسلی تربھنگی چھب سوں ہے کھڑا

تراب علی دکنی

بانس کی لے بانسلی تربھنگی چھب سوں ہے کھڑا

تراب علی دکنی

MORE BYتراب علی دکنی

    بانس کی لے بانسلی تربھنگی چھب سوں ہے کھڑا

    اے مرے بانکے کنییا بول کب سوں ہے کھڑا

    کالے رنگ پر کالی کملی اور کالے کیس چھوڑ

    کس کا دل کرنے پریشاں اس ضرب سوں ہے کھڑا

    کالے کالے ہاتھ میں لے بانس کا پاوا سفید

    گوپنا میں گئو چرئیا مل کے سب سوں ہے کھڑا

    گئو چراوے او کہیں ہور کہیں پھرے رادھا کے سنگ

    کہیں لے چکر ہاتھ میں لڑتے غضب سوں ہے کھڑا

    ہے ترا واہن گرڑ پھینک اے چتربھج واسدیو

    تو نے دس اوتار لے عیش و طرب سوں ہے کھڑا

    بانسلی کا ناد سن کر سد بسر دیوانے ہو

    رکمنی تب سوں کھڑی توں بھی جب سوں ہے کھڑا

    ہو مراری بھوگ لے سب گوپیا کا اے ترابؔ

    بھر کلا بالک ابھوگی کیا سبب سوں ہے کھڑا

    مأخذ :
    • کتاب : دیوان تراب (Pg. 151)
    • Author : شاہ تراب علی دکنی
    • مطبع : انجمن ترقی اردو (پاکستان) (1983)
    • اشاعت : First

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY