Sufinama

اے مہ جبیں کہاں تیرا جلوہ عیاں نہیں

اوگھٹ شاہ وارثی

اے مہ جبیں کہاں تیرا جلوہ عیاں نہیں

اوگھٹ شاہ وارثی

MORE BY اوگھٹ شاہ وارثی

    اے مہ جبیں کہاں تیرا جلوہ عیاں نہیں

    یہ سب تیرے نشاں ہیں پہ تیرا نشاں نہیں

    کعبہ میں کربلا میں کلیسا میں دیر میں

    اس بے نشاں کو ہم نے بھی ڈھونڈھا کہاں نہیں نہیں

    اقرار روز کرتے ہو غیروں سے وصل کا

    سیکھے ہو ایک میرے لیے جان جاں نہیں

    کرتا ہے میرا وعدہ فراموش مجھ کو یاد

    بے وجہ آ جاتی ہیں یہ ہچکیاں نہیں

    منت سے پوچھا کیا نہ کرو گے جفائیں کم

    سفاک کس ڈھٹائی سے بولا کہ ہاں نہیں

    شکوہ کجا شکایت غم کیجے کیا مجال

    اس کا یہ حکم ہے کہ ہلاؤ زباں نہیں

    سچے تمہیں سہی میں برا ہوں برا مگر

    مجھ سا ملے گا بعد میرے مہرباں نہیں

    واعظ بھلا حسینوں کی الفت ہے کیوں حرام

    شاید خدا کی شان یہ حسن بتاں نہیں

    اوگھٹؔ جہاں میں اب دل و دیں پوچھتا ہے کون

    عاشق کا ان بتوں میں کوئی قدر داں نہیں

    مآخذ:

    • Book : فیضان وارثی المعروف زمزمۂ قوالی (Pg. 23)
    • Author : اوگھٹ شاہ وارثی
    • مطبع : جید برقی پریس، دہلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY