Sufinama

دل یہاں بھی مبتلائے زلف پیچاں ہو گیا

اوگھٹ شاہ وارثی

دل یہاں بھی مبتلائے زلف پیچاں ہو گیا

اوگھٹ شاہ وارثی

MORE BY اوگھٹ شاہ وارثی

    دل یہاں بھی مبتلائے زلف پیچاں ہو گیا

    خانۂ احباب بھی اوگھٹؔ کو زنداں ہو گیا

    پھنس گیا دل ایک طفل مہ جبیں کے دام میں

    جس کو ہم دانا سمجھتے تھے وہ ناداں ہو گیا

    سب در و دیوار وحشت ناک آتے ہیں نظر

    ہم کو اے مجنوں ہمارا گھر بیاباں ہو گیا

    وہ رہے آنکھوں میں میری میں نہ دیکھوں غیر کو

    یہ ہمارے اور ان کے عہد و پیماں ہو گیا

    سنگ بوسی کی حرم میں شیخ نے تو ہے ثواب

    ہم اگر بوسہ بتوں کا لیں تو عصیاں ہو گیا

    جب کوئی سختی پڑی اور ہم نے یا وارثؔ کہا

    کام جو مشکل نظر آتا تھا آساں ہو گیا

    ہے خدا کی شان اوگھٹؔ سا مسلماں آدمی

    ان بتوں کی یاد الفت میں بد ایماں ہو گیا

    مآخذ:

    • Book: فیضان وارثی المعروف زمزمۂ قوالی (Pg. 26)
    • Author: اوگھٹ شاہ وارثی
    • مطبع: جید برقی پریس، دہلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY