Sufinama

ایک خوش رو سے محبت ہو گئی

اوگھٹ شاہ وارثی

ایک خوش رو سے محبت ہو گئی

اوگھٹ شاہ وارثی

MORE BY اوگھٹ شاہ وارثی

    ایک خوش رو سے محبت ہو گئی

    دل لگی کی اچھی صورت ہو گئی

    لاکھ پردہ کیجیو ہوتا ہے کیا

    آپ کی ظاہر حقیقت ہو گئی

    عشق بازی میں یہ آزادی ملی

    دین و دنیا سے فراغت ہو گئی

    سنتے ہیں واعظ کہ مے خانہ میں آج

    رہن دستار فضیلت ہو گئی

    بت پرستی کی خدا کو چھوڑ کر

    کیسی الٹی اپنی قسمت ہو گئی

    ہم کو کیا خوش رو جہاں میں لاکھ ہوں

    ہو گئی جس سے محبت ہو گئی

    لگ گئی کس کی خدا جانے نظر

    کیسی برہم اپنی صحبت ہو گئی

    اس کا بحر غم سے بیڑا پار ہے

    جس پہ وارثؔ کی عنایت ہو گئی

    اب گلے مل جاؤ اوگھٹؔ پیار سے

    ہو چکا شکوہ شکایت ہو گئی

    مآخذ:

    • Book: فیضان وارثی المعروف زمزمۂ قوالی (Pg. 12)
    • Author: اوگھٹ شاہ وارثی
    • مطبع: جید برقی پریس، دہلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY