Sufinama

جب خیال آیا مجھے تیرے رخ پر نور کا

اوگھٹ شاہ وارثی

جب خیال آیا مجھے تیرے رخ پر نور کا

اوگھٹ شاہ وارثی

MORE BY اوگھٹ شاہ وارثی

    جب خیال آیا مجھے تیرے رخ پر نور کا

    پھر گیا نقشہ میری آنکھوں میں چشم طور کا

    آبلے پڑنے لگے پائے خیال و فکر میں

    ہے یہ عالم آتش غم سے دل محرور کا

    ایک نظر میں جس نے لاکھوں کو کیا بے ہوش و مست

    دیکھنے والا ہوں میں اس نرگس مخمور کا

    جز ملال و حزن و اندوہ و ہراس و درد و غم

    اور کوئی اب نہیں مونس دل رنجور کا

    فخر یہ ہے میں شہ وارثؔ کے در کا ہوں فقیر

    مرتبہ اوگھٹؔ نہیں جو قیصر و فغفور کا

    مآخذ:

    • Book : فیضان وارثی المعروف زمزمۂ قوالی (Pg. 8)
    • Author : اوگھٹ شاہ وارثی
    • مطبع : جید برقی پریس، دہلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY