Sufinama

جس دن کو ساجن بچھڑے ہیں تس دن کا دل بیمار ہویا

وارث شاہ

جس دن کو ساجن بچھڑے ہیں تس دن کا دل بیمار ہویا

وارث شاہ

MORE BYوارث شاہ

    جس دن کو ساجن بچھڑے ہیں تس دن کا دل بیمار ہویا

    اب کٹھن بنا کیا فکر کروں گھر بار سبھی بیمار ہویا

    دن رات تمام آرام نہیں اب شام پڑی وہ شام نہیں

    وہ ساقی صاحب جان نہیں اب پینا مے دشوار ہویا

    بن جانی جان خراب بہی با آتش شوق کباب بہی

    جوں ماہی بحر بے آب بہی نت رودن ساتھ بیمار ہویا

    مجھے پی اپنے کو لیاؤ رے یا مجھ سوں پی پہنچاؤ رے

    یہ اگن فراق بجھاؤ رے سب تن من جل انگار ہویا

    تب مجنوں کا میل ہویا تھا جب لیلیٰ کہہ کر رویا تھا

    وہ یک دم سیج نہ سویا تھا اب لگ نیک شمار ہویا

    سو میں اب مجنوں وار بہی پردیش بدیس خوار بہی

    اس پی اپنے کی یار بہی اب میرا بھی اعتبار ہویا

    جب وارثؔ شاہ کہلایا نے تب روح سوں روح ملایا نے

    تب سیج سہاگ سلایا نے جیو جان مخزن اسرار ہویا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY