Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

کاکل جو اس کی شعلۂ رخ سے سرک گئی

خواجہ وزیر لکھنوی

کاکل جو اس کی شعلۂ رخ سے سرک گئی

خواجہ وزیر لکھنوی

MORE BYخواجہ وزیر لکھنوی

    کاکل جو اس کی شعلۂ رخ سے سرک گئی

    کالی گھٹا میں صاف یہ بجلی چمک گئی

    میں نے جو آہ سرد بھری اس نے ہنس دیا

    گل کی کلی نسیم سحر سے چٹک گئی

    پہنچی نہ اس کے کان تلک آہ نارسا

    کیا فائدہ زمیں سے اگر تا فلک گئی

    ٹکڑے ہوا ہے میرا گریبان صبر سے

    انگڑائی لی جو یار کی چولی مسک گئی

    بعد از فنا جو قبر پہ آیا وہ اے وزیرؔ

    پہنچانے اس کو روح میری قبر تک گئی

    مأخذ :
    • کتاب : Naghma-e-Sheeri'n (Pg. 4)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے