Sufinama

اس کی خوشبو کے جو خواہاں تھے کیوں نہ ہوئے

مبارک عظیم آبادی

اس کی خوشبو کے جو خواہاں تھے کیوں نہ ہوئے

مبارک عظیم آبادی

MORE BYمبارک عظیم آبادی

    اس کی خوشبو کے جو خواہاں تھے کیوں نہ ہوئے

    طالب بوسۂ رخ زلف دو تا کیوں نہ ہوئے

    نہ وہ جلسہ نہ وہ صحبت نہ وہ یاروں کی محفل ہے

    مرا عیش گذشتہ آج افسانے میں شامل ہے

    اس کی طلب میں صورت ریگ رواں ر ہے

    یونہی خراب حال رہے ہم جہاں رہے

    منہ سے جو انساں کہے اس کا تو کچھ رکھے لحاظ

    قول کا تو پاس ہو انسان کو ایسا دل تو ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY