Sufinama

بن کر میں کبھی موسیٰ سرِ طور جارہا ہوں

ظہوراللہ افتخاری مجیبی

بن کر میں کبھی موسیٰ سرِ طور جارہا ہوں

ظہوراللہ افتخاری مجیبی

MORE BYظہوراللہ افتخاری مجیبی

    بن کر میں کبھی موسیٰ سرِ طور جارہا ہوں

    عیسیٰ مَیں کبھی بن کر مُردے جلارہا ہوں

    وحدانیت پہ مری اب تو یقیں کر لو

    ہر شکل میں میں اپنا جلوہ دکھا رہا ہوں

    روشن کئے ہیں جس نے جذبات حق تعالیٰ

    وہ شمع حقیقت میں دل میں جلا رہا ہوں

    جن کو بجز ہمارے کوئی نہیں ہے سنتا

    توحید کے وہ نغمے ہر وقت گارہا ہوں

    اپنی خبر میں گم ہوں اتنی خبر کہاں ہے

    کسی سمت سے ہوں آیا کس سمت جا رہا ہوں

    خود ہوں میں جام و مینا خود ہی شراب وحدت

    خود ہی میں پی رہا ہوں خود ہی پلا رہا ہوں

    جس میں بجز ہمارے نہ ہو غیر کی سمائی

    اپنا مئے خانۂ دل ایسا بنا رہا ہوں

    دونوں جہاں بنا کر کوئی فرق ہے نہ آیا

    ویسا ہی ہوں میں جیسا پہلے خدا رہا ہوں

    میں ظہورؔ ہوں نہ ظاہر بندہ ہوں میں نہ مولیٰ

    اپنے وجود کو بس میں خیال پا رہاں ہوں

    مأخذ :
    • کتاب : شرح حقیقت، کلام ظہور

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY