Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

جلوہ کوئی نگاہ میں باطل نہیں رہا

سیماب اکبرآبادی

جلوہ کوئی نگاہ میں باطل نہیں رہا

سیماب اکبرآبادی

MORE BYسیماب اکبرآبادی

    جلوہ کوئی نگاہ میں باطل نہیں رہا

    اب امتیاز لیلیٰ و محمل نہیں رہا

    یہ غم نہیں کہ شاد مرا دل نہیں رہا

    ماتم یہ ہے کہ میں ترے قابل نہیں رہا

    بیدار اس کا حسن رہا چشم خواب میں

    مجھ سے تو نیند میں بھی وہ غافل نہیں رہا

    ویراں ہے دل کہ تیرے تصور سے بعد ہے

    یہ آئینہ بھی در خور محفل نہیں رہا

    غم ہوں رہ طلب میں بقدر کمال ذوق

    مجھ کو دماغ ساحل و منزل نہیں رہا

    آئے ہیں چارہ ساز بھی نشتر فروش بھی

    جب میں دوا و درد کے قابل نہیں رہا

    طوفاں نے زندگی سے مجھے سیر کر دیا

    اچھا رہا کہ تشنۂ ساحل نہیں رہا

    ممنون ہوں تری نگہ دل‌ نواز کا

    اے دوست شکریہ مگر اب دل نہیں رہا

    منظور ان کو پرسش سیمابؔ ہے مگر

    سیمابؔ عرض حال کے قابل نہیں رہا

    مأخذ :
    • کتاب : Kaleem-e-Ajam (Pg. 178)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے