Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

اے فطرت آوارہ اے جلوۂ ہرجائی

سیماب اکبرآبادی

اے فطرت آوارہ اے جلوۂ ہرجائی

سیماب اکبرآبادی

MORE BYسیماب اکبرآبادی

    اے فطرت آوارہ اے جلوۂ ہرجائی

    کیا علم میں ہے تیرے میرا غم تنہائی

    اتنی تو کشش فرما اے شعلۂ سینائی

    خاکستر موسیٰ پھر لینے لگے انگڑائی

    پھر تیرے تبسم کی نظریں ہیں تمنائی

    وہ منتخب اک عشوہ منجملۂ رعنائی

    ہیں عشق کے دو نغمے بستانی و صحرائی

    رویا تو گھٹا اٹھی گایا تو بہار آئی

    جلووں کی تو عادت ہے محجوب نظر رہنا

    کچھ تجھ میں بھی جرأت ہے اے چشم تماشائی

    اک عمر ہوئی حیراں ہوں تیرے تجسس میں

    رہنے بھی دے بس اپنی یہ انجمن آرائی

    جب سے مجھے محویت ہے تیرے تصور میں

    آسودۂ جلوت ہوں بے منت تنہائی

    دیوانوں کی تیرے ہے پابند ہوائے گل

    زنجیر بڑھانے کو اٹھے کہ بہار آئی

    سیمابؔ غزل گوئی اب اس کے سوا کیا ہے

    بے فصل کا اک نغمہ بے وقت کی شہنائی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے