Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

ترا جلوہ نورِِ خدا غوثِ اعظم

مصطفیٰ رضا خان

ترا جلوہ نورِِ خدا غوثِ اعظم

مصطفیٰ رضا خان

MORE BYمصطفیٰ رضا خان

    دلچسپ معلومات

    منقبت در شان غوث پاک شیخ عبدالقادر جیلانی (بغداد-عراق)

    ترا جلوہ نورِِ خدا غوثِ اعظم

    ترا چہرہ ایماں فزا غوثِ اعظم

    مجھے بے گماں دے گما ں غوثِ اعظم

    نپاؤں میں اپنا پتا غوثِ اعظم

    خودی کو مٹا دے خدا سے ملا دے

    دے ایسی فنا ؤ بقا غوثِ اعظم

    خودی کو گماؤں تو میں حق کو پاؤں

    مجھے جامِ عرفاں پلا غوثِ اعظم

    خدا ساز آئینہ حق نما ہے

    ترا چہرۂ پرضیا غوثِ اعظم

    خدا تو نہیں ہے مگر تو خدا سے

    جدا بھی نہیں ہے ذرا غوثِ اعظم

    تو باغ علی کا ہے وہ پھول جس سے

    دماغ جہاں بس گیا غوثِ اعظم

    ترا مرتبہ کیوں نہ اعلیٰ ہو مولیٰ

    ہے محبوب رب العلا غوثِ اعظم

    ترا رتبہ اللہ اکبر سروں پر

    قدم اؤلیا نے لیا غوثِ اعظم

    ترا دامن پاک تھامے جو رہزن

    بنے ہادی وہ رہ نما غوثِ اعظم

    نہ کیوں مہرباں ہو غلاموں پہ اپنے

    کرم کی ہے تو کان یا غوثِ اعظم

    ترے صدقے جاؤں مری لاج رکھ لے

    ترے ہاتھ ہے لاج یا غوثِ اعظم

    پریشان کر دے پریشانیوں کو

    پریشان ہے دل مرا غوثِ اعظم

    مری کشتی چکرا رہی ہے بھنور میں

    مرے با خدا نا خدا غوثِ اعظم

    خدا را سہارا، سہارا خدا را

    تلاطم ہے حد سے سوا غوثِ اعظم

    ارے مورے سیاں، پڑوں تورے پیاں

    پکڑ موری بیاں پیا غوثِ اعظم

    خطائیں ہماری جو حد سے سوا ہیں

    عطا تیری ان سے سوا غوثِ اعظم

    خطا کاریاں گرچہ حد سے بھی اپنی

    سوا ہیں سوا ہیں سوا غوثِ اعظم

    ہماری خطا کو تمہاری عطا سے

    بھلا کوئی نسبت بھی یا غوثِ اعظم

    تو رحم و کرم کا ہے بے پایاں دریا

    یہ اک فرد عصیاں ہے کیا غوثِ اعظم

    یہ اک فرد عصیاں ہے کیا ہے تیرے آگے

    اگر لاکھوں سے ہوں سوا غوثِ اعظم

    ترا اک ہی قطرہ دھو دے گا سارا

    ہر اک صفحۂ پر خطا غوثِ اعظم

    تو بیکس کا کس اور بے بس کا بس ہے

    تواں ناتوانوں کی یا غوثِ اعظم

    مری جان میں جان آئے جو آئے

    مرا جانِ عالم، مرا غوثِ اعظم

    مری جان کیا جانِ ایماں ہو تازہ

    کہ ہے محی دینِ خدا غوثِ اعظم

    مرا سر تری کفشِ پا پر تصدق

    وہ پاکے تو قابل ہے کیا غوثِ اعظم

    جھلک روئے انور کی اپنی دکھا کر

    تو نوریؔ کو نوری بنا غوثِ اعظم

    مأخذ :
    • کتاب : Samaan-e-Bakhshish (Pg. 83)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے