Sufinama

یا_وارث

MORE BYعزیز وارثی دہلوی

    دلچسپ معلومات

    (جلوہ گاہ۔ لکھنؤ)

    خزانے میں تمہارے کیا نہیں موجود یا وارث

    مری مشکل بھی حل کر دو مرے مشکل کشا وارث

    خدا کے واسطے بھر دو مری امید کا دامن

    یہی میری تمنا ہے یہی ہے التجا وارث

    ہزاروں حسرتیں لے کر تمہارے در پہ آیا ہوں

    انہیں پورا کرو ورنہ یہیں مٹ جاؤں گا وارث

    اسے کیا خوف عصیاں کا اسے کیا ڈر قیامت کا

    کہا ہے عمر بھر جس نے زباں سے اپنی یا وارث

    عزیز وارثیؔ کو آپ بھی تو جانتے ہوں گے

    جو کہتا ہے مرا مولا مرا آقا مرا وارث

    مأخذ :
    • کتاب : تذکرہ شعرائے وارثیہ (Pg. 161)
    • مطبع : فائن بکس پرنٹرس (1993)
    • اشاعت : First
    • کتاب : سفینہ و ساحل (Pg. 171)
    • Author : عزیزؔ وارثی
    • مطبع : شان ہند، دہلی (1962)
    • اشاعت : 2nd Edition

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے