Sufinama

بید کہے سَرگُن کے آگے نِرگُن کا بسرام

کبیر

بید کہے سَرگُن کے آگے نِرگُن کا بسرام

کبیر

MORE BYکبیر

    بید کہے سَرگُن کے آگے نِرگُن کا بسرام

    سَرگُن نِرگُن تجہو سوہاگن دیکھ سبہی نج دھام

    سکھ دکھ وہاں کچھو نہی ویاپے درسن آٹھوں جام

    نورے اوڑھن نورے ڈاسن نورے کا سرِہان

    کہیں کبیرؔ سنو بھائی سادھو ستگرو نور تمام

    ویدوں کا کہنا ہے کہ سَرگُن کے آگے نِرگُن پھیلا ہوا ہے، (صفات کی آڑ میں بے صفات چھپا ہوا ہے) اے سُہاگن سَرگُن اور نِرگُن کے جھمیلوں میں تجھے کیا ملے گا، دیکھ ہر مقام تیرا مقام ہے، وہاں سکھ اور دکھ کا دھندلکا نہیں ہے، آٹھوں پہر چاروں طرف درشن ہی درشن ہے (دیدار ہی دیدار ہے) نور کی چادر ہے، نور کی مسند ہے، نور کا تکیہ ہے، سنو بھائی سادھو کبیرؔ کہتے ہیں کہ ست گرو سراپا نور ہے۔

    (ترجمہ: سردار جعفری)

    مأخذ :
    • کتاب : کبیر سمگر (Pg. 779)
    • Author :کبیر
    • مطبع : ہندی پرچارک پبلیکیشن پرائیویٹ لیمیٹید، وارانسی (2001)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY