Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

سلام اس پر کہ جو ہم صورت وہم راز حیدر تھا

آرزو سہارن پوری

سلام اس پر کہ جو ہم صورت وہم راز حیدر تھا

آرزو سہارن پوری

MORE BYآرزو سہارن پوری

    سلام اس پر کہ جو ہم صورت وہم راز حیدر تھا

    سلام اس پر جو دست وبازوئے سبط پیمبر تھا

    سلام اس پر کہ جو بحر شجاعت کا شناور تھا

    سلام اس پر جو ناز جرأت حمزہ وجعفر تھا

    سلام اس پر بنی ہاشم کا جس کو چاند کہتے تھے

    سلام اس پر کہ جس کا نام عباسِ دلاور تھا

    سلام اس پر کہ عالی تھا زمانے میں نسب جس کا

    سلام اس پر کہ سقائے سکینہ تھا لقب جس کا

    سلام اس پر جلال ہاشمی تھا جس کی فطرت میں

    سلام اس پر کہ شان حیدری تھا جس کی صورت میں

    سلام اس پر کہ جو حسن اعتبار قلب زینب تھا

    سلام اس پر کہ انس فاطمی تھا جس کی سیرت میں

    سلام اس پر علم کی شان اب تک جس سے قائم ہے

    سلام اس پر جواب اب تک نہیں جس کی شجاعت میں

    سلام اس پر کہ جو اک نور تھا برج فضیلت کا

    سلام اس پر کہ جو اک راز تھا قلب امامت کا

    سلام اس پر کہ دی شمع یقیں کی روشنی جس نے

    سلام اس پر کہ بخشا روح کو عیش خودی جس نے

    سلام اس پر جو صبروشکر کی منزل کا رہرو تھا

    سلام اس پر کہ شانے کٹ گئے اور اف نہ کی جس نے

    سلام اس پر کہ ٹھوکر ماردی جس نے حکومت پر

    سلام اس پر نہ بدلی فقر سے شاہنشہی جس نے

    سلام اس پر جو خضر منزل ایمان وایقاں تھا

    سلام اس پر جو نباض مزاج اہل عرفاں تھا

    سلام اس پر جو وارث تھا امیرِ ہفت کشور کا

    سلام اس پر جو ناظم تھا علوم حق کے دفتر کا

    سلام اس پر کہ جس کا آج تک ثانی نہیں کوئی

    سلام اس پر کہ جس میں زور تھا نفسِ پیمبر کا

    سلام اس پرکہ بار غم اٹھایا جس نے خوش ہوکر

    سلام اس پر کہ جو غم خوار تھا زہرا کی دل برکا

    سلام اس پر کہ دشمن کانپتے تھے جس کی ہیبت سے

    سلام اس پر فرات اب تک ہے لررزاں نام سے جس کے

    سلام اس پر جفا سے بڑھے کر ٹکرا دی وفا جس نے

    سلام اس پر ہلا دی سرزمین ِ کربلا جس نے

    سلام اس پر سنواری زلف تسلیم ورضا جس نے

    سلام اس پر نہ سمجھا کوئی بھی جس کا مقام اب تک

    مأخذ :
    • کتاب : تذکرہ شعرائے اتر پردیش جلد گیارہویں (Pg. 37)
    • Author : عرفان عباسی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے