Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

خودی پر اشعار

نیستی ہستی ہے یارو اور ہستی کچھ نہیں

بے خودی مستی ہے یارو اور مستی کچھ نہیں

شاہ نیاز احمد بریلوی

جب تلک میری خودی باقی رہی سب کچھ تھا

رہ گیا پھر تو فقط نام خدا میرے بعد

امداد علی علوی

وہ عروج ماہ وہ چاندنی وہ خموش رات وہ بے خودی

وہ تصورات کی سر خوشی ترے ساتھ راز و نیاز میں

سیماب اکبرآبادی

کبھی دیر و کعبہ بتا دیا کبھی لا مکاں کا پتا دیا

جو خودی کو ہم نے مٹا دیا تو وہ اپنے آپ میں پا گئے

اکبر وارثی میرٹھی

زندگی کو بیچ ڈالا بے خودی کے جام پر

ایک ہی ساغر سے دل کی تشنگی جاتی رہی

بیخود سہر وردی

مصلحت یہ ہے خودی کی غفلتیں طاری رہیں

جب خودی مٹ جائے گی بندہ خدا ہو جائے گا

سیماب اکبرآبادی

بے خودی میں بھی ترا نام لئے جاتے ہیں

روگ یہ کیسا لگا ہے ترے مستانے کو

فنا بلند شہری

جب خودی احدیت نے دور کیا

نور وحدت نے تب ظہور کیا

عطا حسین فانی

نشیلی نگاہوں کے مارے ہوؤں کو بس اک بے خودی میں گزارے ہوؤں کو

تیری مست آنکھوں کے قربان ساقی انہیں ساغروں سے پلانا پڑےگا

کامل شطاری

جنوں ظاہر ہوا رخ پر خودی پر بے خودی چھائی

بہ قید ہوش میں جب بھی قریب آستاں پہنچا

فنا بلند شہری

خرد ہے مجبور عقل حیراں پتہ کہیں ہوش کا نہیں ہے

ابھی سے عالم ہے بے خودی کا ابھی تو پردہ اٹھا نہیں ہے

افقر موہانی

گزر جا منزل احساس کی حد سے بھی اے افقرؔ

کمال بے خودی ہے بے نیاز ہوش ہو جانا

افقر موہانی

کسی کی مست نگاہی نے ہاتھ تھام لیا

شریک حال جہاں میری بے خودی نہ ہوئی

جگر مرادآبادی

تیرے نین پر خمار کوں سرمست بادہ ناز

یا بے خودی کا جام یا سحر بلا کہوں

قادر بخش بیدلؔ

خودی خوداعتمادی میں بدل جائے تو بندوں کو

خدا سے سرکشی کرنے کی نوبت آ ہی جاتی ہے

فقیر قادری

تو نے اپنا جلوہ دکھانے کو جو نقاب منہ سے اٹھا دیا

وہیں حیرت بے خودی نے مجھے آئینہ سا دکھا دیا

شاہ نیاز احمد بریلوی

نہیں بندہ حقیقت میں سمجھ اسرار معنی کا

خودی کا وہم برہم زن پچھے بے خود خدائی کر

قادر بخش بیدلؔ

آنا ہے جو بزم جاناں میں پندار خودی کو توڑ کے آ

اے ہوش و خرد کے دیوانے یاں ہوش و خرد کا کام نہیں

جگر مرادآبادی

ظفرؔ اس سے چھٹ کے جو جست کی تو یہ جانا ہم نے کہ واقعی

فقط ایک قید خودی کی تھی نہ قفس تھا کوئی نہ جال تھا

بہادر شاہ ظفر

جوئی اول سوئی آخر جوئی ظاہر سوئی باطن

خودی کے ترک میں جلدی سے مخفی سب عیاں ہوگا

قادر بخش بیدلؔ

کہ خرد کی فتنہ گری وہی لٹے ہوش چھا گئی بے خودی

وہ نگاہ مست جہاں اٹھی مرا جام زندگی بھر گیا

فنا بلند شہری

اس کے ہوتے خودی سے پاک ہوں میں

خوب ہے بے خودی نہیں جاتی

بیدم شاہ وارثی

عموما خانۂ دل میں محبت آ ہی جاتی ہے

خودی خوداعتمادی میں بدل جائے تو بندوں کو

فقیر قادری

بے خودی کی یہی تکمیل ہے شاید اے دوست

تو جو آتا ہے تو میں ہوش میں آ جاتا ہوں

قیصرؔ شاہ وارثی

وفور بے خودیٔ بزم مے نہ پوچھو رات

کوئی بجز نگۂ یار ہوشیار نہ تھا

آسی غازیپوری

بیدمؔ خستہ ہے کہاں اصل میں کوئی اور ہے

زمزمہ سنج بے خودی نغمہ طراز ساز عشق

بیدم شاہ وارثی

تو اے محبت گواہ رہنا کہ تیرے مضطرؔ کو وقت آخر

خیال ترک خودی رہا ہے تو دل میں یاد خدا رہی ہے

مضطر خیرآبادی

ہم تو اپنی بے خودیٔ شوق میں سرشار تھے

آپ سے کس نے کہا تھا خود نما ہو جائیے

سیماب اکبرآبادی

اب نہ اپنا ہوش ہے مجھ کو نہ کچھ اس کا خیال

بے خودی طاری ہے جب سے ہو گئی رفتار اور

شمس صابری

نہ چھیڑ اے ہم نشیں کیفیت صہبا کے افسانے

شراب بے خودی کے مجھ کو ساغر یاد آتے ہیں

حسرت موہانی

کیا کہوں کیا لا مکاں میں عمر مضطرؔ کاٹ دی

بے خودی نے جس جگہ رکھا وہاں رہنا پڑا

مضطر خیرآبادی

وصل عین دوری ہے بے خودی ضروری ہے

کچھ بھی کہہ نہیں سکتا ماجرا جدائی کا

عزیز صفی پوری

جہان بیخودی میں مستیٔ وحدت جو لے جائے

فرشتے لیں قدم میرے وہ ہوں میں رند مستانہ

ابراہیم عاجزؔ

قدم قدم پہ رہی ایک یاد دامن گیر

تمہاری بزم میں یہ مجھ کو بے خودی نہ ہوئی

عزیز وارثی دہلوی

سر جب سے جھکایا ہے در یار پہ میں نے

محراب خودی جلوہ گہہ شمع حرم ہے

فنا بلند شہری

دیکھ کے بے خودی مری آج وہ مسکرا دیا

عشق جنوں مزاج نے حسن کو گدگدا دیا

ذکی وارثی

یہ نرم و ناتواں موجیں خودی کا راز کیا جانیں

قدم لیتے ہیں طوفاں عظمت ساحل سمجھتے ہیں

جگر مرادآبادی

مے خانہ میں خودی کو نہیں دخل شیخ جی

بے خودی ہوا ہے جن نے پیا ہے وہ جام خاص

خواجہ رکن الدین عشقؔ

سیمابؔ کوئی مرتبہ منصور کا نہ تھا

لفظ خودی کی شرح نہ مشہور کر دیا

سیماب اکبرآبادی

کہہ دیا فرعون نے بھی میں خدا کر کے خودی

ہو کے بے خود جب کہے انکار کی حاجت نہیں

کشن سنگھ عارفؔ

مرداںؔ جو کوئی ڈوبے دریائے عشق میں وہ

چھوٹے خودی سے اپنے حب وطن سے نکلے

مردان صفی

نگاہ یار مری سمت پھر اٹھی ہوگی

سنبھل سکوں گا نہ میں ایسی یہ بے خودی ہوگی

فنا بلند شہری

تمہیں پر سے بہزادؔ نے بے خودی میں

کیا دل تصدق جوانی لٹا دی

بہزاد لکھنوی

شۂ بے خودی نے عطا کیا مجھے اب لباس برہنگی

نہ خرد کی بخیہ گری رہی نہ جنوں کی پردا دری رہی

سراج اورنگ آبای

نہ وہ ہوش ہے نہ وہ بے خودی نہ خرد رہی نہ جنوں رہا

یہ تری نظر کی ہیں شوخیاں یہ کمال ہے ترے ناز میں

قیصرؔ شاہ وارثی

دوئی جا کے رنگ صفا رہ گیا

خودی مٹتے مٹتے خدا رہ گیا

مضطر خیرآبادی

کہاں شمسؔ بندا کہاں تو خدایا

خدا و خودی ہم بھلائے ہوئے ہیں

شمس صابری

کیوں یہ خدا کے ڈھونڈنے والے ہیں نامراد

گزرا میں جب حدود خودی سے خدا ملا

سیماب اکبرآبادی

یہ کس نے نگاہوں سے ساغر پلائے خودی پر میری بے خودی بن کے چھائے

خبردار اے دل مقام ادب ہے، کہیں بادانوشی پے دھبا نا آئے

سعید شہیدی

مشکل ہے تا کہ ہستی ہے جاوے خودی کا شرک

تار نفس نہیں ہے یہ زنار ساتھ ہے

خواجہ میر اثر

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

متعلقہ موضوعات

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے