Sufinama
Kamil Shattari's Photo'

کامل شطاری

1905 - 1976 | حیدرآباد, بھارت

’’آپ کو پاتا نہیں جب آپ کو پاتا ہوں میں‘‘ لکھنے والے شاعر

’’آپ کو پاتا نہیں جب آپ کو پاتا ہوں میں‘‘ لکھنے والے شاعر

کامل شطاری

غزل 14

شعر 42

کلام 43

رباعی 2

 

نعت و منقبت 35

مخمس 1

 

ویڈیو 37

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
دیگر
آپ کونین کی ہیں جان رسول_عربی

نا معلوم

ان_کا ہو کر خود انہیں اپنا بنا سکتا ہوں میں

نا معلوم

انہیں کی مرضی پہ چل رہا ہوں، انہیں کی مرضی تو چل رہی ہے

محبوب بندہ نوازی

اے شعلۂ_جوالہ جب سے لو تجھ سے لگائے بیٹھے ہیں

نا معلوم

بطفیل_دامن_مرتضیٰ میں بتاؤں کیا مجھے کیا ملا

نا معلوم

بطفیل_دامن_مرتضیٰ میں بتاؤں کیا مجھے کیا ملا

نا معلوم

بھیک دے جائیے اپنے دیدار کی مرنے والے کا ارماں نکل جائے گا

نا معلوم

بیگانۂ_عرفاں کو حقیقت کی خبر کیا

نا معلوم

پاس آتے ہیں مرے اور نہ بلاتے ہیں مجھے

نا معلوم

تجلی نور قدم_غوث اعظم

نا معلوم

ترے حسن کا کرشمہ مری ہر بہار خواجہ

نا معلوم

تمہاری دید میں ہے وہ اثر یا غوث صمدانی

نا معلوم

تیری نظر سے دل کو سکوں ہے قرار ہے

نا معلوم

خلاصہ پنجتن کا ہیں معین_الدین_و_محی_الدیں

نا معلوم

رازِ دل کسی عنواں لب پہ لا نہیں سکتے

عقیل اور شکیل وارثی

رسول‌_اللہؐ سے نسبت پے قسمت ناز کرتی ہے

عزیز احمد خان وارثی

روپ اس کے نت نئے اور آئینہ خانے ہزار

نا معلوم

سائے میں تمہارے دامن کے جس دن سے گزارا کرتے ہیں

نا معلوم

سرتاج_رسل مکی مدنی سرکار_دو_عالم صل_علیٰ

نا معلوم

عشق کی بربادیوں کی پھر نئی تمہید ہے

نا معلوم

عشق_نبوی کیا ہے کونین کی دولت ہے

نا معلوم

غم_عشق میں آہ_و_فریاد کیسی ہر اک ناز ان_کا اٹھانا پڑے_گا

نا معلوم

مری نظر میں ہے روضہ ترا غریب_نواز

عقیل اور شکیل وارثی

میرے بنے کی بات نہ پوچھو میرا بنا ہریالا ہے

منظور نیازی

وہ جب سے خرمن مسرتوں کا جلا گئے بجلیاں گرا کے

نا معلوم

کرم کا وقت ہے حد سے زیادہ ہے پریشانی

نا معلوم

کرم ہو جائے تو کر لوں نظارا یا رسول_اللہ

نا معلوم

کسمپرسی میں غریبوں کے سہارے خواجہ

نا معلوم

کلام_خدا ہے کلام_محمد

نا معلوم

کون بیٹھا ہے اب اندیشۂ فردا لے کر

حاجی محبوب علی

ہر اک مشکل میں کام آئی دہائی میرے مولیٰ کی

نا معلوم

ہے جملہ جہاں پرتو_انوار_محمد

نا معلوم

ہے حاصل_حیات محبت رسول کی

نا معلوم

یار کی مرضی کے تابع یار کا دم_بھر کے دیکھ

نا معلوم

یہ بارگاہِ خواجۂ بندہ نواز ہے

نا معلوم

یہ دل حضور پہ قرباں نہیں تو کچھ بھی نہیں

نا معلوم

میرے بنے کی بات نہ پوچھو میرا بنا ہریالا ہے

محمد محبوب بندہ نوازی

متعلقہ صوفی شعرا

"حیدرآباد" کے مزید شعرا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے