Sufinama
noImage

چرن داس جی

1703 - 1839 | بھارت

ماتا سوں ہری سو گنا جن سے سو گرو دیو

پیار کریں اوگن ہریں چرن داسؔ سک دیو

ستگرو شبدی سیل ہے سہے دھموکا سادھ

کائر اوپر جو چلئے تو جاوئے برباد

جب ستگرو کرپا کریں کھولی دکھاویں نین

جگ جھوٹھا دیکھن لگے دیہہ پرے کی سین

گرو کے آگے جاے کری ایسے بولئے بول

کچھو کپٹ راکھے نہیں ارج کریے من کھول

دیا ہوئے گرو دیو کی بھجئے مان ارو مین

بھوگ واسنا سب چھٹے پاوئے اتی ہی چین

درشٹی پڑے گرو دیو کی دیکھت کریں نہال

اوریں متی پلٹیں تویے کاگا ہوت مرال

اندری من کے بس کریے من کریے بدھی کے سنگ

بدھی راکھے ہری پد جہاں لاگے دھیان ابھنگ

پتو سوں ماتا سوگنا ست کو راکھے پیار

من سیتی سیون کریے تن سوں ڈانٹ ارو گار

اپنا کری سیون کریں تین بھانتی گر دیو

پنجہ پچھی کنج من کچھوا درشٹی جو بھیو

ایسی ماری کینچ کر لگی وار گئ پار

جن کا آپا نا رہا بھیے روپ تتسار

ستگرو کے مارے موے بہری نہ اپجیے آے

چوراسی بندھن چھوٹیں ہریپد پہنچئے جاے

یہ آپا تم کوں دیا جت چاہو تت راکھ

چرن داسؔ دوارے پرو بھاوئے جھڑکو لاکھی

جدی جدی پانچو کہوں ایک ایک کا بھید

جو کوئ ان کوں بس کریے سبہیں چوٹیں کھید

ستگرو میرا سورما کریے شبد کی چوٹ

ماریے گولا پریم کا ڈھیے بھرم کا کوٹ

مکھ سیتی بولن تھکا سنئے تھکا جو کان

پاون سوں پھروا تھکا ستگرو مارا بان

ستگرو شبدی تیر ہے تن من کیو چھید

بے دردی سمجھے نہیں برہی پاوئے بھید

اندری من ملی ہوت ہے بشیہ باسنا چاہ

اپجیے جیسے کام ہیں ناری ملی ارو ناہ

جاتی برن کل آسرم مان بڑائی کھویہ

جب ستگرو کے پگ لگے سانچ ششیہ ہوے سوئے

ہری روٹھیں کچھ ڈر نہیں تو بھی دے چھٹکاے

گرو کو راکھو سیس پر سب بدھی کریں سہاے

ستگرو ڈھونڈھا پائیے نہیں سہیلا ہوے

سش بھی پورا کوئ ہو ثانی ماٹی جوے

ستگرو شبدی تیغ ہے لاگت دو کری دیہی

پیٹھ پھیری کائر بھجئے سورہ سنمکھ لیہی

درجن کے پھوٹے بنا تیری ہوئے نہ جیت

چرن ہداسؔ بچاری کری ایسی کہیئے ریت

انڈا جب آگے گرے تب گرو لیویں سیئی

کریے برابر آپنی سکھ کو نسندیہہ

جت جت اندری جات ہے تت من کوں لے جات

بدھی بھی سنگہی جات ہے یہ نسچیہ کری بات

ستگرو شبدی ماریا پورا آیا وار

پریمی جوجھے کھیت میں لگا نہ راکھا تار

جت اندری من ہوں گیا رہی کہاں سوں بدھدی

چرنداسؔ یوں کہت ہیں کری دیکھو تم سدھدی

نیارے نیارے چہت ہے اپنے اپنے سواد

ان پانچو میں پریت ہے کچھو نہ بعد بباد

جو وے بچھریں گھڑی بھی تو گندا ہوئ جاے

چرنداسؔ یوں کہت ہیں گرو کو راکھ رجھاے

چلو کریے تھر نا رہے کوٹی جتن کری راکھ

یہ جبہیں بس ہویگا اندر کے رسناکھ

اندری روکے تے رکیں اور جتن نہں کوے

من چنچل رجھوار ہے رسک سوادی ہوے

ستگرو شبدی لاگیا ناوک کا سا تیر

کسکت ہے نکست نہیں ہوت پریم کی پیر

شبد بان موہں ماریا لگی کلیجہ ماہں

ماری ہنسے سکدیو جی باقی چھوڑی نانہں

اندر سوں من جدا کری سرتی نرتی کری سودھ

اپجیے نا بش باسنا چرن داسؔ کر بودھ

کانچے بھانڈے سوں رہے جیوں کمہار کا نیہ

بھیتر سوں اچھا کریے باہر چاٹے دیہہ

میں مرگا گرو پارگھی شبد لگایو بان

چرن داسؔ گھائل گرے تن من بیدھے پران

ستگرو شبدی بان ہے انگ انگ ڈارے توڑ

پریم کھیت گھائل گرے ٹانکا لگئے نہ جوڑ

Added to your favorites

Removed from your favorites