Sufinama
Dayaa Bai's Photo'

دَیا بائی

بھارت

باعتبار

تین لوک نو کھنڈ کے لئے جیو سب ہیر

دیاؔ کال پرچنڈ ہے مارئے سب کوں گھیر

برہم بسمبھر باسودیو بسوروپ بلبیر

بیاس بودھ بادھاہرن بیاپک سکل سریر

نر دیہی دینہیں جبے کینہو کوٹی کرار

بھکتی قبولی آدی میں جب میں بھیو لبار

بڑے بڑے پاپی ادھم تارت لگی نہ بار

پونجی لگے کچھو نند کی حے پربھو ہمری بار

تیری دس آسا لگی بھرمت پھروں سب دیپ

سوانتی ملے سناتھ ہو جیسے چاترک سیپ

ہوں پانور تم ہو پربھو ادھم ادھارن ایس

دیا داسؔ پر دیا ہو دیا سندھو جگدیس

چکئی کل میں ہوت ہے بھان ادے آنند

دیا داسؔ کے درگن تیں پل نہ ٹرو برج چند

گردھر گوبند گوپدھر گروڑدھوج گوپال

گوبر دھن شری گدادھر گج تارن گرہ سال

چت چاترک رٹنا لگی سوانتی بوند کی آس

دیا سدھ بھگوان جو پوجاویے اب کی آس

دیاکنورؔ یا جکت میں نہیں آپنو کوے

سوارتھ بندھی جیو ہے رام نام چت جوے

سیس نوے تو تمہں کوں تمہں سوں بھاکھوں دین

جو جھگروں تو تمہں سوں تم چرنن آدھین

تم ٹھاکر تریلوک پتی یہ ٹھگ بس کری دیہو

دیا داسؔ آدھین کی یہ بنتی سنی لیہ

چھانڑو بشیے بکار کوں رام نام چت لاو

دیاکنورؔ یا جگت میں ایسو کال بتاو

کاہو بل اپ دیہہ کو کاہو راجہی مان

موہں بھروسو تیرہی دین بندھو بھگوان

دھوپ ہرے چھایا کریے بھوجن کو پھل دیت

سرنائے کی کرت ہے سب کاہو پر ہیت

کانہا کورم کرپاندھی کیسو کرشن کرپال

کنجبہاری کریٹ دھر کنساسر کو کال

کلپ برچھ کے نکٹ ہیں سکل کلپنا جاے

دیا داسؔ تاتیں لئی سرن تیہاری آے

دیاؔ سپن سنسار میں نا پچی مریے بیر

بہتک دن بیتے برتھا بہ بھجیے رگھوبیر

سیتاپتی سمرتھ جو صاحب سالگرام

سیس سائں سہجہی سبل سندھ متھن شری شیام

راون کنمبھ کرن گیے درجودھن بلونت

مار لیے سب کال نے ایسے دیاؔ کہنت

اجر امر ابگت امت انبھیے الکھ ابھیو

ابناسی آنندمیے ابھے سو آنند دیو

دیا دان ارو دینتا دینا ناتھ دیال

ہردے سیتل درشٹی سم نرکھت کریں نہال

کائر کنپئے دیکھ کری سادھو کو سنگرام

سیس اتاریئے بھئں دھرئے جب پاوئے نج ٹھام

تن مد دھن مد راج مد انت کال مٹ جاے

جن کے مد تیرو پربھو تیہں جم کال ڈیراے

اسنکھ جیو تری تری گیے لے لے تمہرو نام

اب کی بیری باپ جی پرو مگدھ سے کام

ایسر ایس اگوچرا انترجامی ناتھ

ٹھاکر شری ہری دوارکا داسن کرن سناتھ

ادھم ادھارن برد سن نڈر رہیوں من مانہں

برد بانو کی ہار دیو کی تارو گہی بانہں

سدن کسائی دیکھی کے کو نہں دیت بڑائ

بڑے برچھ کی چھانہ میں کو نہی بلمت آیٔ

چوراسی چرکھان کو دکھ سہو نہی جاے

دیا داسؔ تاتیں لئی سرن تیہاری آئے

کام کرودھ مد لوبھ نہں کھٹ بکار کری ہین

پنتھ کوپنتھ نہ جانہیں برہم بھاؤ رس لین

نرپچھی کے پچھ تم نرادھار کے دھار

میرے تم ہیں ناتھ اک جیون پران ادھار

ہو اناتھ کے ناتھ تم نیک نہارو موہی

دیا داسؔ تن ہے پربھو لہر مہر کی ہو ہی

رام رمییا رماپتی رام چندر رگھوبیر

راگھو رگھبر راگھوا، رادھا رمن اہیر

پاربرہم پر ماتما پرشوتم پرم ہنس

پدم نام پیتامبر پرمیسر پرسنس

دین بندھو دیال جو دیناناتھ دنیس

دیون دیو دمودرا دسمکھ بدھ اودھیس

مقصودن موہن مدن مادھو مچھ مرار

مدہاری شری مکٹ گھر مدھپر مل پچھار

بدریپتی بیادھا ہرن بنسی دھر رنچھور

پرس رام باراہ بپو پاون بندی چھور

سنت دینتا داس کی بلم کہوں نہں کین

دیا داسؔ من کامنا من بھائی کر دین

جو جاکی تاکئے سرن تاکو تاہی کھبھار

تم سب جانت ناتھ جو کہا کہوں بستار

تین لوک میں ہے پربھو تم ہیں کرو سو ہوئے

سر نر منی گندھرب جے میٹی سکیں نہی کوے

دیاکنورؔ یا جکت میں نہیں رہیو تھر کوے

جیوسو باس سرانیں کو تیسو یہ جگ ہوئے

سادھ سادھ سب کواو کہے درلبھ سادھو سیو

جب سنگتی ہیوئے سادھ کی تب پاوئے سب بھیو

اینچا کھینچی کرت ہیں اپنی اپنی اور

اب کی بیر ابار لو تربھون بندی چھور

تمہیں سوں ٹیکا لگو جیسے چندر چکور

اب کاسوں جھانکھا کروں موہن نند کسور

ملیاگر کے نکٹ ہیں سب چندن ہو جات

چھوٹے کرم کباسنا مہا سگندھ مہکات

برجیئے تنکا کرت ہو تنکئے برج بناے

مہر تمہاری ہے پربھو ساگر گری اترائے

کرم پھانس چھوٹے نہیں تھکت بھیو بل مور

اب کی بیر اباری لو ٹھاکر بندی چھور

بندو شری سکدیو جی سب بدھی کرو سہاے

ہرو سکل جگ آپدا پریم سدھا رس پیاے

دیاؔ پریم انمت جے تن کی تنی سدھی ناہں

جھکے رہیں ہری رس چھکے تھکے نیم برت ناہں

تات مات تمہرے گیے تم بھی بھیے تیار

آج کالہ میں تم چلو دیاؔ ہوہو ہسیار