Sufinama
noImage

جمال

1568 - 1593

باعتبار

جملا تہاں نہ جائیے جاں کیہری نوان

آ سنبھرائسی دکھڑا مارائسی اپان

نین رنگیلے کچ کٹھن مدھر بین پک لال

کامن چلی گیند گتی سب بدھی ونی جمالؔ

الک لگی ہے پلک سئے پلک لگی بھوننال

چندن چوکی کھول دے کب کے کھڑے جمالؔ

یا تن کی بھٹی کروں من کوں کروں کلال

نیناں کا پیالہ کروں بھر بھر پیو جمالؔ

درجن نندت سجن کوں تالک نانہن لال

چھار گھسے جیوں آرسی دونیں جوتی جمالؔ

جملا ایسی پریت کر جیسی نس ار چند

چندے بن نس سانولی نس بن چندو مند

بنسی باجئے لال کی گن گندھرو بہال

گرہ تجی تجی تہں کل ودھو سنونن سنت جمالؔ

مکھ گریشم پاوس نین تن بھیتر جڑکال

پیہ بن تیہ تین رتو کبھہوں نہ مٹیں جمالؔ

سسی کلنک کھارو سمدر کملہں کنٹک نال

گیانی دکھی مرکھ سکھی دئیکوں بوجھی جمالؔ

شتر گریو بھہرائے کے جب آ پہنچیو کال

الپ مرتیو کوں دیکھی کیں جوگی بھیو جمالؔ

گن کے گاہک لکھ بھئے نینا بھئے دلال

دھنی بست نہی بچہیں بھولے پھرے جمالؔ

جب ترنپو مجھیو پاے پرت نت لال

کر گرہ سیس نواوتی جوبن گرب جمالؔ

الک جو لاگی پلک سوں پلک رہی تِہاں لال

کھڑکی کھولی نہ آوہی صورتی یاک جمالؔ

جملا کپڑا دھوئیے ست کا صابن لائے

بوند ز لاگی پریم کی ٹوک ٹوک ہو جاے

منسا تو گاہک بھئے نینا بھئے دلال

بست کھسم بیچے نہیں بٹے کہا جمالؔ

سسی کھنجن مانک کنول کیر ودن ایک ڈال

بھجنگ پونچھ تیں ڈست ہے نرکھت ڈریوں جمالؔ

اب نہی جاؤں سنان کو، بھولی سکھی اہی تال

اک چکئی ارو کمل کوں بہت وجوگ جمالؔ

رے ہتیارے ادھرمی تں نہ آوت لال

جوبن اجنری نیر سم چھن گھٹ جات جمالؔ

جملا پریت سجان سیں جے کر جانئے کوئے

جیسا میلہ نجر کا تیسا سیج نہ ہوئے

سونا بیا نہ نیپجئے موتی لگئے نہ ڈال

روپ ادھارا ناں ملے بھولے پھرو جمالؔ

نیناں کا لڈوا کروں کچ کا کروں انار

سیس نائے آگے دھروں لیوو چتر جمالؔ

ایک سکھی ایسے کہیو وے آئے گھن لال

اجھکی بال جھکی کیں لکھے اتی دکھ بھیو جمالؔ

کھوٹے کا کو کہے دھنی کھوٹے دام ہی لال

سوئی تا کوں آدرئے جاکے دام جمالؔ

دُسساسن اینچن اچت بھری بسن کی مال

چیر بدھایو دروپدی رچھا کری جمالؔ

یو من نیکے لگت ہو موہت مو من لال

کہوں کہا موہن تمیں پیت نہ ہوت جمالؔ

پیہ پھولے تیں ہوں ہری پیا ہریں ہوں ڈال

پیا مو ہو مو میں پیا اک ہیوئے رہے جمالؔ

اروجھی ریجھ ریجھے نہیں ہوتنی موہی لال

پیہ آونکی آس سوں لالہی بھئی جمالؔ

مور مکٹ کٹی کاچھنی مرلی سبد رسال

آوت ہے بنی ومل کے میرے لال جمالؔ

ڈگمگ نین سسگمگے ومل سو لکھے جو بال

تسکر چتونی سیام کی چت ہر لیو جمالؔ

جملا ایسی پریت کر جیوں بالک کی ماے

من لے راکھے پالنے تن پانی کوں جائے

جب جب میرے چت چڑھئے پریتم پیارے لال

ار تیکھے کروت جیوں بیدھت ہِیو جمالؔ

الک جو لاگی پلک پر پلک رہی تہں لال

پریم کیر کے نین میں نیند نہ پرئے جمالؔ

یا تن کی ساریں کروں پریت جو پاسے لال

ستگرو داؤں بتائیا چوپر رمے جمالؔ

رادھے کی بیسر بچیں بنی امولک بال

نندکمار نرکھت رہیں آٹھوں پہر جمالؔ

جملا پریت نہ کیجیے کاہو سوں چت لائے

الپ ملن بچھوڑن بہت تڑپھ تڑپھ جیہ جائے

ترور پت نپت بھیو پھر تپیو تتکال

جوبن پت نپت بھیو پھر پتیو نہ جمالؔ

ودھی بدھی کے سب ودھی جپت کوؤ لہت نہ لال

سو ودھی کو ودھی نند گھر کھیلت آپ جمالؔ

نینا کہیت پنگنی کہو تمہانرے لال

ڈسے پچھے سبدن کچھو لاگت نانہی جمالؔ

کر گھونگھٹ جگ موہیے بہت بھلائے لال

درسن جنیں دکھائیاں درسن جوگ جمالؔ

کرجیو گور جمالؔ کی نگر کوپ کے مانئہ

مرگ نینی چپلا پھریں پڈیں کچن کی چھانیہ

سجن ایہا چاہئیے جیہا ترور تال

پھل بھچھت پانی پیت نانہیں نہ کرت جمالؔ

کاہو کے بس نہ ہو وس نہ سو کاکے لال

بسن کون کے جات ہو پلٹیں بھیش جمالؔ

پونم چاند کسونبھ رنگ ندی تیر درم ڈال

ریت بھینت بھج لپنو اے تھر نہیں جمالؔ

چتر چتیرا جو کرئے رچی پچی صورت بال

وہ چتونی وہ مر چلنن کیوں کر لکھے جمالؔ

پریت جو کیجئے دیہہ دھر اتم کل سوں لال

چکمک جگ جل میں رہئے اگن نہ تجے جمالؔ

جگ ساگر ہے اتی گہر لہری وشیں اتی لال

چڑھی جہاز اتی نام کی اتریں پار جمالؔ

جوبن آئے گاہکی نیناں ملے دلال

گاہک آئے لین کوں بیچو کیوں نہ جمالؔ

تیہ نندی پیہ ساسو سو کلہ کری تتکال

سانجھ پرت سونو بھون بجھئی دیپ جمالؔ

ابسی چین چت رین دن بھجہیں کھگادھپدھیائے

سیتا پتی پد پدم چہ کہہ جمالؔ گن گائے

جملا ایسی پریت کر جیسی کیس کرائے

کے کالا کے اوجلا جب تب سر سوں جائے