Sufinama
noImage

شاہ کاظم قلندر

1745 - 1806 | کاکوری, بھارت

خانقاہ کاظمیہ، کاکوری کے بانی اور روحانی شاعر

خانقاہ کاظمیہ، کاکوری کے بانی اور روحانی شاعر

شاہ کاظم قلندر کا تعارف

تخلص : 'کاظم'

اصلی نام : محمد کاظم

پیدائش :دہلی

وفات : اتر پردیش, بھارت

Relatives : شاہ تراب علی قلندر ()

حضرت شاہ کاظم قلندر شاہ کاشف چشتی کے فرزند سعادت مند تھے، آپ بتاریخ 17 رجب المرجب 1158ھ کو کاکوری میں پیدا ہوئے، آپ نہایت سلیم الطبع، قوی الحافظہ، عالی ہمت، عقیل و فہیم، خوش اخلاق اور پابند شریعت تھے، بچپن سے انوار ولایت و کرامت اور آثار رشد و ہدایت جبین سیادت آگیں سے تاباں و نمایاں تھے، آپ نے اوائل کتب درسیہ ملا عبدالعزیز کاکوری اور ملا حمیدالدین کاکوری سے اور اوسط اوآخر ملا غلام یحییٰ بہاری اور ملا احمد اللہ سندیلی سے پڑھیں، زمانہ طالب علمی سے علم تصوف کی طرف میلان خاطر تھا، متقدمین اور متاخرین حضرات صوفیہ کی کتابیں اپنے مطالعہ میں رکھتے، معاصرین میں شاہ ولی اللہ محدث دہلوی کی طرز تحریر اور ان کی تحقیقات کو بہت پسند کرتے تھے، شاہ کاظم قلندر کو بیعت اور اجازت و خلافت حضرت شاہ باسط علی قلندر الہ آبادی سے تھی، آپ سلسلۂ قلندریہ کے نہایت عظیم المرتبت صوفی اور مرتبہ قطبیت کبریٰ اور ولایت عظمیٰ کے حامل تھے، محمدالمشرب اور قطب الارشاد تھے، اس کے علاوہ بھی آپ نے دیگر صوفیہ سے اکتساب فیض کیا، "فصل مسعودیہ" میں ہے کہ شاہ کاظم قلندر نے دس سال اپنے پیرومرشد کی خدمت میں رہ کر مقامات طریقت کی تکمیل کی اور اذکار و افکار اور دعوت اسما وغیرہ حاصل کرکے اجازت و خلافت سلاسل سبعہ سے سرفراز ہوکر عارف باللہ ہوئے اور اپنے وطن میں پیرومرشد کے حکم کے موافق اقامت اختیار کرکے ایک عالم کو اپنے انوار طاعات سے منور اور افادۂ علوم دینی و معارف یقینی سے مستفیض فرمایا، شاہ کاظم قلندر مجمع السلاسل بزرگ گزرے ہیں، ان کی خانقاہ کاظمیہ، کاکوری کی تاریخ میں بلکہ اودھ میں نہایت اہم رول ادا کرتی ہے، آپ صاحب تصانیف تھے، آپ کی تصیفات میں نغمات الاسرار معروف بہ سانت رس مشہور ہے جس میں ہندی کلام حقائق و معارف پر مشتمل ہے، اس کے علاوہ اور بھی آپ کی تصنیفات ہیں، آپ کی وفات بعارضہ تپ 21 ربیع الاخر 1221ھ 62 برس کی عمر میں ہوئی، مزار کاکوری میں ایک خوبصورت گنبد میں واقع ہے۔

موضوعات