Sufinama
Unknown's Photo'

نا معلوم

نا معلوم

غزل 35

شعر 1

 

صوفیانہ مضامین 4

 

کلام 212

دکنی صوفی شاعری 1

 

فارسی کلام 26

راگ آدھارت پد 10

ویڈیو 280

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
مزاح
آپ کونین کی ہیں جان رسول_عربی

نا معلوم

آج ان کے دامن پر اشک میرے ڈھلتے ہیں

نا معلوم

آج وہ ساقی ہیں میں میخوار ہوں

نا معلوم

آدم کا بت بنا کے اس میں سما گیا ہوں

نا معلوم

آنکھ لڑنے کا بہانہ ہو گیا

نا معلوم

آیا بنا آیا، ہریالا بنا آیا راج دلارا بنا آیا

نا معلوم

ﺍﺏ ﺗﻨﮕﯽٔ ﺩﺍﻣﺎں ﭘﮧ ﻧﮧ ﺟﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﻣﺎﻧﮓ

نا معلوم

اپنا محرم جو بنایا تجھے میں جانتا ہوں

نا معلوم

اپنی خودی کے ہم ہیں پجاری

نا معلوم

اپنی نگاہِ شوق کو روکا کریں گے ہم

نا معلوم

اپنے میں دکھاتا ہے جو اللہ کا جلوہ، اجمیر کا خواجہ

نا معلوم

آتا نظر ہے جلوۂ دیدار ہر طرف

نا معلوم

آتا ہے دل میں بت کی پرستش کیا کروں

نا معلوم

اس نے بھری محفل کو دیوانہ بنا ڈالا

نا معلوم

اس یار کو پہچانو جو سب سے نرالا ہے

نا معلوم

اسی گمشدہ کا پتہ مل گیا ہے وہیں ہیں محمدؐ جہاں پر خدا ہے

نا معلوم

اسے کیا پاؤ گے پانے کی خود تدبیر الٹی ہے

نا معلوم

اگر چہ نفس امارہ میں یہ جنبش نہیں ہوئی

نا معلوم

اگر خدا ہے تو میں نہیں ہوں اگر ہوں میں تو خدا نہیں ہے

نا معلوم

اللہ رے انسان اللہ رے اللہ

نا معلوم

ان_کا ہو کر خود انہیں اپنا بنا سکتا ہوں میں

نا معلوم

اک دم کوئی گر دیکھے وہ جلوۂ جانانہ

نا معلوم

اک قیامت بن گئی ہے آشنائی آپ کی

نا معلوم

ایک نظر مجھ پہ بھی وہ تاج_شفاعت والے

نا معلوم

اے شعلۂ_جوالہ جب سے لو تجھ سے لگائے بیٹھے ہیں

نا معلوم

اے فتنہ_ہر_محفل اے محشر_تنہائی

نا معلوم

بطفیل_دامن_مرتضیٰ میں بتاؤں کیا مجھے کیا ملا

نا معلوم

بطفیل_دامن_مرتضیٰ میں بتاؤں کیا مجھے کیا ملا

نا معلوم

بھیک دے جائیے اپنے دیدار کی مرنے والے کا ارماں نکل جائے گا

نا معلوم

بہت مدت سے تھی حسرت نذر خواجہ کے ہو جاؤں

نا معلوم

بیگانۂ_عرفاں کو حقیقت کی خبر کیا

نا معلوم

پاس آتے ہیں مرے اور نہ بلاتے ہیں مجھے

نا معلوم

پردۂ_نور میں ہیں یار مدینے والے

نا معلوم

پیشِ حق کچھ ترا نمونہ رہے

نا معلوم

تجلی نور قدم_غوث اعظم

نا معلوم

تجھی کو جو یاں جلوہ فرما نہ دیکھا

نا معلوم

تری الفت میں مر مٹنا شہادت اس کو کہتے ہیں

نا معلوم

ترے حسن کا کرشمہ مری ہر بہار خواجہ

نا معلوم

تم جس کو دیکھ لو وہ نہ پہلو میں پائے دل

نا معلوم

تمہاری دید میں ہے وہ اثر یا غوث صمدانی

نا معلوم

تیری نظر سے دل کو سکوں ہے قرار ہے

نا معلوم

جب غیر نظر سے دور ہوا اور پائی صفائی نینن میں

نا معلوم

جب میری دید کی اس کو خواہش ہوئی عرش سے فرش پر مجھ کو لانا پڑا

نا معلوم

جس طرف سے گلشن_عدنان گیا

نا معلوم

جستجو خدا کی تھی مل گیا مدینے میں

نا معلوم

جفا و جور کیا یا وفا ہوا سو ہوا

نا معلوم

جن راتوں میں نیند اڑ جاتی ہے کیا قہر کی راتیں ہوتی ہیں

نا معلوم

جو کفن باندھ کے سر سے گزرے

نا معلوم

جہان سب ہم نے چھان مارا حسین_یکتا تمہیں کو دیکھا

نا معلوم

جہاں ہے دیکھ کر شیدا یہ میرے پیر کی صورت

نا معلوم

چراغ_خانۂ_زہرا_و_حیدر قطب_ربانی

نا معلوم

چھڑا دیتی ہے فکر غیر سے تاثیر میخانہ

نا معلوم

حیدر کا پوت آیا زہرا کا جایا آیا

نا معلوم

خانۂ دل میں خدا تھا مجھے معلوم نہ تھا

نا معلوم

خدا بے_شکل تھا لینی پڑی صورت محمدؐ کی

نا معلوم

خدا کو میں نے دیکھا ہے میرے مرشد کی صورت میں

نا معلوم

خدا کو یاد کرتا ہوں صنم کی آشنائی میں

نا معلوم

خدا_وند_مطلق ہمارا علی ہے

نا معلوم

خلاصہ پنجتن کا ہیں معین_الدین_و_محی_الدیں

نا معلوم

خواجۂ_خواجگاں کی چادر ہے

نا معلوم

خود اپنے کو پانا ہی اللہ کو پانا ہے

نا معلوم

خود کی تحقیق میں راز یہ کھل گیا

نا معلوم

خوشی میں خفی سے نکل جا رہا ہے

نا معلوم

دل میں کچھ اور مرے حسرت_و_ارمان نہیں تیری چاہت کے سوا

نا معلوم

دل ہو گیا ہے جب سے شیدا ابو_العلا کا

نا معلوم

دنیا کے چمن میں پیر میرا دیوانہ بنا کر چھوڑ دیا

نا معلوم

دکھا کے اس نے جمال اپنا قرار سب میرا لے لیا ہے

نا معلوم

دید بن اللہ محمدؐ سے محبت کیسی

نا معلوم

دین سے دور نہ مذہب سے الگ بیٹھا ہوں

نا معلوم

دیکھ پردہ اٹھا کے غفلت کا

نا معلوم

ذات رب ذوالمنن خواجہ معین الدین حسن

نا معلوم

ذکر انی انا اللہ کیا ہوں

نا معلوم

راز یہ اپنے پہ کھلتا کیوں نہیں

نا معلوم

روپ اس کے نت نئے اور آئینہ خانے ہزار

نا معلوم

رہنے دو چپ مجھے نہ سنو ماجرائے_دل

نا معلوم

زندہ رہتا ہے زندے میں

نا معلوم

سائے میں تمہارے دامن کے جس دن سے گزارا کرتے ہیں

نا معلوم

ساتھ خواجہ بھی ہیں غوث_اعظم بھی ہیں

نا معلوم

سب کچھ ہے دفن مجھ میں وہ زندہ مزار ہوں

نا معلوم

سجدہ میرا وہاں ادا نہ ہوا

نا معلوم

سراپا نقشہ دلدار ہوں میں

نا معلوم

سراپا ہے یہ اللہ کا ذرا دیکھو محمدؐ کو

نا معلوم

سرتاج_رسل مکی مدنی سرکار_دو_عالم صل_علیٰ

نا معلوم

سلام_عشق تجھے اے بہار_غم بینی

نا معلوم

سنے کون قصہ_درد_دل میرا غم_گسار چلا گیا

نا معلوم

شوق سے ناکامی کی بدولت کوچۂ دل بھی چھوٹ گیا

نا معلوم

شکل مرشد کو گھور دیوانے

نا معلوم

صندل لگاؤں تجھے او میرے ہریالے بنے

نا معلوم

صنم کے جسم میں آ کر نفس کا تار کہتے ہیں

نا معلوم

ظلم ہم پر ہر_آن ہوتے ہیں

نا معلوم

عشق کی بربادیوں کی پھر نئی تمہید ہے

نا معلوم

عشق کی حد سے نکلتے پھر یہ منظر دیکھتے

نا معلوم

عشق_نبوی کیا ہے کونین کی دولت ہے

نا معلوم

عنایت کی نظر ہو جائے مجھ آفت کے مارے پر

نا معلوم

غبارِ کوچۂ مرزا ہوں نقشِ آب نہیں

نا معلوم

غم_عشق میں آہ_و_فریاد کیسی ہر اک ناز ان_کا اٹھانا پڑے_گا

نا معلوم

فیض بخشی کی ہے کیا شان ترے کوچہ میں

نا معلوم

گندم کو کھا کے رضواں ہیں ایسے حال میں ہم

نا معلوم

لا_مکاں چھپ نہ سکا یار تمہارا ہم سے

نا معلوم

لو مدینے کی تجلی سے لگائے ہوئے ہیں

نا معلوم

لے کے دل میں محبت کی پاکیزگی گھر سے نکلے تھے دیر و حرم کے لیے

نا معلوم

ماٹی کے پتلے تجھے کتنا گمان ہے

نا معلوم

مایوس سائل نے جب گھر کی راہ لی

نا معلوم

مجھے مشکل ہے تجھے پاس بلانا جانا

نا معلوم

محبت کی ہم چوٹ کھائے ہوئے ہیں

نا معلوم

محمدؐ پہ دل کیا مرا آ گیا

نا معلوم

محمدؐ خدا ہے خدا ہے محمدؐ

نا معلوم

محمدؐ مصطفیٰ کا جانشیں صدیق_اکبر ہے

نا معلوم

مظہر ذات خدا ہے اپنا خواجہ بادشاہ

نا معلوم

من کا مالا جپ رہا ہوں رکھ کے تم کو سامنے

نا معلوم

مٹ گیا زنگِ خودی دل کی صفائی ہو گئی

نا معلوم

میرا پیر مجھ کو خرید کر مجھے قید و بند سے چھڑا دیا

نا معلوم

میری جستجو کا بھلا ہوا، میری جستجو کا صلہ ملا

نا معلوم

میری ٹکٹکی سلامت میرا یار سامنے ہے

نا معلوم

میکدے کا نظام تم سے ہے

نا معلوم

میں آئی سہیلی عدم کے نگر سے

نا معلوم

میں آئینہ ہوں شخص اور عکس تو ہے

نا معلوم

میں برا ہوں یا بھلا ہوں میری لاج کو نبھانا

نا معلوم

میں خود کو ڈھونڈھتا ہوں وہ ہاتھ آ رہے ہیں

نا معلوم

میں دنگ ہوں اپنے میں حیرت اسے کہتے ہیں

نا معلوم

میں سن کر مست ہوں نغمہ کسی کا

نا معلوم

میں وحدت کا پردہ ہوں الحمد للہ

نا معلوم

نام اب جس کا خواجہ ہے

نا معلوم

نظروں سے پی رہا ہوں میں میخانہ جا کے کیا کروں

نا معلوم

نوری محفل پہ چادر تنی نور کی نور پھیلا ہوا آج کی رات ہے

نا معلوم

نکل گئے ہیں خرد کی حدوں سے دیوانے

نا معلوم

نہ ہے بت_کدہ کی طلب مجھے نہ حرم کے در کی تلاش ہے

نا معلوم

نہیں اب آپ کی فرقت کا یارا یا رسول_اللہ

نا معلوم

نہیں ممکن ہر اک کے دل میں نقش یار ہو پیدا

نا معلوم

وہ ادائے_دلبری ہو کہ نوائے_عاشقانہ

نا معلوم

وہ جب سے خرمن مسرتوں کا جلا گئے بجلیاں گرا کے

نا معلوم

وہ کہتے ہیں، میں اب تو ہو گیا ہوں

نا معلوم

وہی آبلے ہیں وہی جلن کوئی سوزِ دل میں کمی نہیں

نا معلوم

کبھی ان کا نام لینا کبھی ان کی بات کرنا

نا معلوم

کرم کا وقت ہے حد سے زیادہ ہے پریشانی

نا معلوم

کرم ہو جائے تو کر لوں نظارا یا رسول_اللہ

نا معلوم

کریں ہم کس کی پوجا اور چڑھائیں کس کو چندن ہم

نا معلوم

کس چیز کی کمی ہے مولا تری گلی میں

نا معلوم

کس طرح سے پکارے تمہیں کیا کہا کرے

نا معلوم

کس قدر محو_تماشا ہو گیا

نا معلوم

کسمپرسی میں غریبوں کے سہارے خواجہ

نا معلوم

کسی کو ہجر تڑپائے تمہیں کیا

نا معلوم

کعبے میں بس گیا ہے صنم کس کے واسطے

نا معلوم

کعبے میں بھی ہے گرمئی_بازار_محمدؐ

نا معلوم

کلام_خدا ہے کلام_محمد

نا معلوم

کوئی مزہ مزہ نہیں کوئی خوشی خوشی نہیں

نا معلوم

ہر اک مشکل میں کام آئی دہائی میرے مولیٰ کی

نا معلوم

ہرے جھنڈے کے شہزادے جی میرے پیر دستگیر

نا معلوم

ہم اپنے سوا غیر کو سجدہ نہیں کرتے

نا معلوم

ہم نے سو آفتیں مول لی جان_جاں اک تمہاری ہی راضی خوشی کے لیے

نا معلوم

ہے جملہ جہاں پرتو_انوار_محمد

نا معلوم

ہے حاصل_حیات محبت رسول کی

نا معلوم

یار اپنی شکل میں ہے ہم ہیں شکل_یار میں

نا معلوم

یار اغیار میں نظر آیا

نا معلوم

یار کی مرضی کے تابع یار کا دم_بھر کے دیکھ

نا معلوم

یہ ایک شکل ہے محشر میں منہ دکھانے کی

نا معلوم

یہ بارگاہِ خواجۂ بندہ نواز ہے

نا معلوم

یہ جہاں بھی تو ہے اس کی آخری منزل بھی تو

نا معلوم

یہ دل حضور پہ قرباں نہیں تو کچھ بھی نہیں

نا معلوم

یہ راز کھلا ہم پر اسرار خلافت میں

نا معلوم

یہ میرے پیر کا مجھ پر کرم ہے

نا معلوم

یہ ہے اللہ کا فرمان ہر اک کو سنا دینا

نا معلوم

یہ ہے شرابِ عشق اسے دل لگا کے پی

نا معلوم

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے